January 15, 2010

ترے بعد

بجُز ہوا، کوئی جانے نہ سلسلے تیرے
میں اجنبی ہوں، کروں کس سے تذکرے تیرے؟

یہ کیسا قرب کا موسم ہے اے نگارِ چمن
ہوامیں رنگ نہ خوشبو میں ذائقے تیرے

میں ٹھیک سے تیری چاہت تجھے جتا نہ سکا
کہ میری راہ میں حائل تھے مسئلے تیرے

گلوں کو زخم، ستاروں کو اپنے اشک کہوں
سناؤں خود کو ترے بعد تبصرے تیرے

ہزار نیند جلاؤں ترے بغیر مگر
میں خواب میں بھی نہ دیکھوں وہ رتجگے تیرے

ہوائے موسمِ گُل کی ہیں لوریاں ، جیسے
بکھر گئے ہوں فضاؤں میں قہقہے تیرے


September 16, 2008

شورشِ زنجیر

ہُوئی پھر امتحانِ عشق کی تدبیر بسم اللہ

ہر اک جانب مچا کہرامِ دار و گیر بسم اللہ

گلی کوچوں میں بکھری شورشِ زنجیر بسم اللہ

درِ زنداں پہ بُلوائے گئے پھر سے جُنوں والے

دریدہ دامنوں والے ،پریشاں گیسوؤں والے

جہاں میں دردِ دل کی پھر ہوئی توقیر بسم اللہ

ہوئی پھر امتحانِ عشق کی تدبیر بِسم اللہ

گنو سب داغ دل کے ، حسرتیں شوقیں نگاہوں کی

سرِ دربار پُرستش ہورہی ہے پھر گناہوں کی

کرو یارو شمارِ نالہ شب گیر بسم اللہ

ستم کی داستاں ، کُشتہ دلوں کا ماجرا کہئے

جو زیر لب نہ کہتے تھے وہ سب کچھ برملا کہئے

مُصرِ ہے محتسب رازِ شہیدانِ وفا کہئے

لگی ہے حرفِ نا گُفتہ پر اب تعزیر بِسم اللہ

سرِ مقتل چلو بے زحمتِ تقصیر بِسم اللہ

ہُوئی پھر امتحانِ عشق کی تدبیر بِسم اللہ


August 27, 2008

NFC Constituted to Workout Resource Distribution Formula

This article by Khalique Kayani was originally published in the Dawn [opens in new window/tab].

ISLAMABAD, Aug 26: [edited]

The new NFC would be for five years and its immediate job would be to work out a resource distribution formula. The government has been advised to take systematic decentralisation measures and encourage provinces to generate their own revenue.

This would help to reduce their dependence on the centre. The last NFC was constituted on July 21, 2005, but it failed to achieve consensus on a mechanism for resource distribution. The deadlock led to a situation where the Shaukat Aziz government prevailed upon the provincial chief ministers to authorise the president to announce an award.

The president, under Article 160(6) of the Constitution, amended the “Distribution of Revenues and Grants In Aid Order, 1997” and announced the NFC award which took effect on July 1, 2006.

Sources said that despite a political change at the centre and in the provinces, the stakeholders more or less remained stuck to their old stated positions.

Punjab continued to insist that the new formula should be based on population.

However, other provinces are against making population the sole criterion for resource distribution, saying that like in most other countries factors like revenue generation, poverty, population density, income distribution and backwardness should be taken into account while finalising the award.

Under the present formula, total subvention for provinces was enhanced from Rs8.7 billion to Rs27.75 billion and it was promised that these would be increased in line with the growth of net proceeds.

Punjab and Sindh which had not been given any grants in the previous award, were entitled to receive Rs3.05 billion and Rs5.83 billion, respectively.

The total increase in the resource transfer from the federal to provincial governments in the form of share and subventions was of almost Rs51bn. The other important aspect of the award was an increase in straight transfers of royalties on gas and crude oil, excise duty on gas and gas development surcharge.

In addition, the NWFP government is also receiving net hydel profit from Wapda at a capped level of Rs6 billion a year pending adjudication on an independent arbitration award that offered about Rs24 billion to the NWFP.

The provincial shares of the divisible pool are to substantially increase over time under the award given by former President General Pervez Musharraf.

In addition to straight transfers, the federal government under the Public Sector Development Programme (PSDP) also finances different development projects in the provinces either fully or on 50:50 basis.

The non-development funds transferred to provinces include compensation for victims of natural calamities.

Under the award, the provincial share was revised to 45 per cent (share in total divisible pool + grants) for the first financial year, to eventually reach 50 per cent with subsequent increases of 1 per cent per annum by 2010-11.

These shares would, however, be subject to revision by the new NFC.

The federal government on Tuesday reconstituted the National Finance Commission (NFC) to work out a formula for distribution of resources of the federal divisible pool among the centre and the provinces.

Headed by Finance Minister Syed Naveed Qamar, the 10member NFC comprises the Prime Minister’s Adviser on Economic Affairs Hina Rabbani Khar, four provincial finance ministers and four non-statutory provincial members.

The provincial private members include Saeed Qureshi from Punjab, Kaiser Bengali from Sindh, Senator Haji Mohammad Adeel from the NWFP and Dr Gulfraz Ahmad from Balochistan.

Mr Qamar told reporters that the first meeting of the commission would be convened soon to seek proposals from the provinces.

He said the provinces would get 45 per cent from the federal divisible pool.


حصارِ ستم


میرے غنیم نے مجھ کو پیام بھیجا ہے


کہ حلقہ زن ہیں میرے گرد لشکری اس کے

فصیلِ شہر کے ہر برج ، ہر منارے پر


کماں بدست ستادہ ہے لشکری اس کے


وہ برق لہر بجھا دی گئی ہے جس کی تپش

وجودِ خاک میں آتش فشاں جگاتی تھی

بچھا دیا گیا بارود اس کے پانی میں

وہ جوئے آب جو میری گلی کو آتی تھی

سبھی دریدہ دھن اب بدن دریدہ ہوئے

سپردِ دارورسن سارے سر کشیدہ ہوئے

تمام صوفی و سالک، سبھی شیوخ و امام

امیدِ لطف پے ایوانِ کج نگاہ میں ہیں

معززینِ عدالت حلف اٹھانے کو

مثالِ سائلِ مبرم نشستہ راہ میں ہیں

تم اہلِ حرف کے پندار کے شناگر تھے

وہ آسمانِ ہنر کے نجوم سامنے ہیں

بس اس قدر تھا کہ دربار سے بلاوا تھا

گداگرانِ سخن کے ہجوم سامنے ہیں

قلندرانِ وفا کی اساس تو دیکھو

تمہارے ساتھ ہے کون، آس پاس تو دیکھو

سو شرط یہ ہے جو جاں کی امان چاہتے ہو

تو اپنے لوح و قلم قتل گاہ میں رکھ دو

وگرنہ اب کے نشانہ کمان داروں کا

بس ایک تم ہو، سو غیرت کو راہ میں رکھ دو

یہ شرط نامہ جو دیکھا تو ایلچی سے کہا

اسے خبر نہیں تاریخ کیا سکھاتی ہے

کہ رات جب کسی خورشید کو شہید کرے

تو صبح اک نیا سورج تراش لاتی ہے

سو یہ جواب ہے میرا ،میرے عدو کے لئے

کہ مجھ کو حرصِ کرم ہے نہ خوفِ خمیازہ

اسے ہے سطوتِ شمشیر پر گھمنڈ بہت

اسے شکوہ قلم کا نہیں ہے اندازہ

میرا قلم نہیں کردار اس محافظ کا

جو اپنے شہر کو محصور کرکے ناز کرے

میرا قلم نہیں کاسہ کسی سبک سر کا

جو غاصبوں کو قصیدوں سے سرفراز کرے

میرا قلم نہیں اوزار اس نقب زن کا

جو اپنے گھر کی ہی چھت میں شگاف ڈالتا ہے

میرا قلم نہیں اس دزدیدِ نیم شب کا رفیق

جو بے چراغ گھروں پر کمند اچھالتا ہے

میرا قلم نہیں تسبیح اس مبلغ کی

جو بندگی کا بھی ہر دم حساب رکھتا ہے

میرا قلم نہیں میزان ایسے عادل کی

جو اپنے چہرے پے دھرا نقاب رکھتا ہے

میرا قلم تو امانت ہے میرے لوگوں کی

میرا قلم تو عدالت میرے ضمیر کی ہے

اسی لئے تو جو لکھا تپاکِ جاں سے لکھا

جبیں پہ لوچ کماں کا، زبان تیر کی ہے

میں کٹ گروں کہ سلامت رہوں ، یقیں ہے مجھے

! کہ یہ حصارِ ستم کوئی تو گرائے گا


August 18, 2008

Self–accountability Plan – Ramadan, 1429 Hijri

A humble effort to help us organise our Ramadan this year. Download the following excel file, distribute and personalise as you may like.

ramadan_plan.xls [right-click on the link and select "save target as" or "save link as"]


Moon Sighting Predictions

www.moonsighting.com [opens in new window/tab]

The Astronomical New Moon is on Saturday, August 30, 2008 at 19:58 Universal Time (i.e., 3:58 pm EDT, and 12:58 pm PDT ). This moon is impossible to be seen any where on earth on August 30. On August 31, the moon will be sightable in South America by naked eye, and possibly in South Africa and in Central America if weather conditions are perfect. It would be very difficult to see in North America on August 31, but it will be visible on Sep 1, Insha-Allah. Therefore, first day of Ramadan (fasting) in North America according to sighting, is expected to be September 2, Insha-Allah. However, according to Saudi Ummul-Qura calendar, Fiqh Council of North America, and European Council for Fatwa and Research, the first day of Ramadan is on Monday, September 1, 2008.


Moon Sighting Regions 31 August 2008







.



In UK, the moon may still not be visible on September 1; thus, September 2 will be 30th of Sha'ban.


.


Moon Sighting Regions 1 September 2008


.

However, some friends may be interested in knowing about a new Fatwah from Darul Uloom Deoband. According to this Fatwah, the first day of Ramadan in UK will be September 2, because the moon should be easily seen by naked eye from Australia to Morocco. The .pdf file of this Fatwah is available here [opens in new window/tab].

In Pakistan also, sighting will be easy on September 1, and first day of Ramadan will be September 2.

Wallah-o A'alam Bissawwab!


August 05, 2008

Whose son, whose daughter?

یہ بچہ کالا کالا سا
یہ کالا سا مٹیالا سا
یہ بچہ بھوکا بھوکا سا
یہ بچہ سوکھا سوکھا سا
یہ بچہ کس کا بچہ ہے

یہ بچہ کیسا بچہ ہے
جو ریت پہ تنہا بیٹھا ہے
نا اس کے پیٹ میں روٹی ہے
نا اس کے تن پر کپڑا ہے
نا اس کے سر پر ٹوپی ہے
نا اس کے پیر میں جوتا ہے
نا اس کے پاس کھلونوں میں
کوئی بھالو ہے، کوئی گھوڑا ہے
نا اس کا جی بہلانے کو
کوئی لوری ہے، کوئی جھولا ہے
نا اس کی جیب میں دھیلا ہے
نا اس کے ہاتھ میں پیسا ہے
نا اس کے امی ابو ہیں
نا اس کی آپا خالہ ہے

یہ سارے جگ میں تنہا ہے
یہ بچہ کس کا بچہ ہے




(2)
یہ صحرا کیسا صحرا ہے
نہ اس صحرا میں بادل ہے
نا اس صحرا میں برکھا ہے
نا اس صحرا میں بالی ہے
نا اس صحرا میں خوشہ ہے
نا اس صحرا میں سبزہ ہے
نا اس صحرا میں سایا ہے

یہ صحرا بھوک کا صحرا ہے
یہ صحرا موت کا صحرا ہے

(3)
یہ بچہ کیسے بیٹھا ہے
یہ بچہ کب سے بیٹھا ہے
یہ بچہ کِیا کچھ پوچھتا ہے
یہ بچہ کیا کچھ کہتا ہے
یہ دنیا کیسی دنیا ہے
یہ دنیا کس کی دنیا ہے

(4)
اِس دنیا کے کچھ ٹکڑوں میں
کہیں پھول کھلے کہیں سبزہ ہے
کہیں بادل گِھر گِھر آتے ہیں
کہیں چشمہ ہے، کہیں دریا ہے
کہیں اونچے محل اٹاریاں ہیں
کہیں محفل ہے، کہیں میلا ہے
کہیں کپڑوں کے بازار سجے
یہ ریشم ہے، یہ دیبا ہے
کہیں غلے کے انبار لگے
سب گیہوں دھان مہیا ہے
کہیں دولت کے صندوق بھرے
ہاں تانبا، سونا، روپا ہے
تم جو مانگو سو حاضر ہے
تم جو مانگو سو ملتا ہے

اس بھوک کے دکھ کی دنیا میں
یہ کیسا سکھ کا سپنا ہے؟
یہ کس دھرتی کے ٹکڑے ہیں؟
یہ کس دنیا کا حصہ ہے؟

(5)
ہم جس آدم کے بیٹے ہیں
یہ اس آدم کا بیٹا ہے
یہ آدم ایک ہی آدم ہے
وہ گورا ہے یا کالا ہے
یہ دھرتی ایک ہی دھرتی ہے
یہ دنیا ایک ہی دنیا ہے
سب اِک داتا کے بندے ہیں
سب بندوں کا اِک داتا ہے
کچھ پورب پچھم فرق نہیں
اِس دھرتی پر حق سب کا ہے

(6)
یہ تنہا بچہ بیچارہ
یہ بچہ جو یہاں بیٹھا ہے

اِس بچے کی کہیں بھوک مِٹے
(کیا مشکل ہے، ہو سکتا ہے)
اِس بچے کو کہیں دُودھ ملے
(ہاں دُودھ یہاں بہتیرا ہے)
اِس بچے کا کوئی تن ڈھانکے
(کیا کپڑوں کا یہاں توڑا ہے؟)
اِس بچے کو کوئی گود میں لے
(انسان جو اب تک زندہ ہے)

پھر دیکھیے کیسا بچہ ہے
یہ کِتنا پیارا بچہ ہے!

(7)
اِس جگ میں سب کچھ رب کا ہے
جو رب کا ہے، وہ سب کا ہے
سب اپنے ہیں کوئی غیر نہیں
ہر چیز سب کا ساجھا ہے
جو بڑھتا ہے، جو اُگتا ہے
وہ دانا ہے، یا میوہ ہے
جو کپڑا ہے، جو کمبل ہے
جو چاندی ہے ، جو سونا ہے
وہ سارا ہے اِس بچے کا
جو تیرا ہے، جو میرا ہے

یہ بچہ کس کا بچہ ہے؟
یہ بچہ سب کا بچہ ہے




May 17, 2008

Mohtarema Sherry Rahman Shaheed

Sherry Rahman is an MP, a federal minister, a leader of leaders and friend of friends … a trait that is supposed to be common in the PPP leaders as in words of now poison-less Makdoom Ameen Fahim, “yaaron key yaar”. However, I have to switch off my sarcstic mode and seriously mention that she is merely People’s Party representative, not “peoples’ representative”, unfortunately for peoples. She was never elected. She was picked to become the show piece for the new parliamentary setup. Well, not much of a surprise since even the Prime Minister seems to be a rubber stamp. Interestingly, the term “rubber stamp” was introduced by the PM himself by saying that he would not let the parliament become a rubber stamp. True. But he would let his cabinet become one, instead of letting the parliament. He couldn’t even accept and forward PMLN ministers’ resignation in time, saying, “decision on these resignations will be taken once Mr. Zardari is back from London”. I mean, what on earth is going on??

Although, there are numerous questions about the qualifications of the members of Gilani cabinet, Sherry Rahman and Rahman Malik have had severe objections over even their very eligibility to become ministers or advisors. But hey, what are we talking about. When the PM takes dictation from Mr. Zardari, who isn’t even an MP, what harm in Mr. Zardari throwing in his friends in the cabinet like extra onions in jalfarezi for flavour!

Having wished Sherry a long and healthy life, I have no harm in expressing that while qualifications don’t matter anymore for even being a martyr, I foresee the day when she will be titled “Mohtarema Sherry Rahman Shaheed”!!


February 28, 2008

احادیث کی تشریح

_بصد شکريہ رابرٹ پِگوٹ
نامہ نگار برائے امورِ مذہبی امور، بی بی سی نیوز_

====

ترکی میں ایک دستاویز کی اشاعت کی تیاری کی جا رہی ہے جس میں اسلام کی از سر نو تشریح اور مذہب کو جدید تقاضوں سے ہم آہنگ کرنے کی بات کی گئی ہے۔ اس دستاویز کو انقلابی قرار دیا جا رہا ہے۔
ترکی کی بااختیار وزارتِ مذہبی امور نے انقرہ یونورسٹی میں مذہبی علماء کی ایک ٹیم کی خدمات حاصل کی ہیں جسے احادیث کا از سر نو جائزہ لینے کا کام سونپا گیا ہے۔ اسلام میں قران کے بعد پیغبر اسلام کے ارشادات اور احکامات کو جنہیں حدیث کہا جاتا ہے بنیادی اہمیت حاصل ہے۔

احادیث جو پیغمبر اسلام کے ہزاروں کی تعداد میں ارشادات اور احکامات پر مشتمل ہیں مسلمانوں کے لیے قران کی تشریح کا ایک ذریعہ ہیں اور بہت سے اسلامی قوانین کی اساس بھی۔

ترکی کی حکومت کے خیال میں بہت سی احادیث متنازعہ ہیں اور ان سے ’معاشرے میں منفی اثر پڑ رہا ہے‘ اور ان کی از سر نو تشریح کرانے کی ضرورت ہے۔ ان کے خیال میں ان احادیث سے اسلام کی اصل اقدار کا مفہوم بھی دھندلا گیا ہے۔ ترکی کے حکام اس دستاویز کی حساس نوعیت اور اس سے روایتی مسلمانوں میں پیدا ہونے والے ممکنہ تنازعہ کی وجہ سے اس بارے میں پوری رازداری سے کام لے رہے تھے۔ لیکن انہوں نے بی بی سی سے اس کے متعلق بات کی اور اس کے مقاصد بیان کیے۔حکومت کا دعویٰ ہے کہ بہت سی ایسی احادیث موجود ہیں جو غلط طور پر پیغمبرِ اسلام سے منسوب کر دی گئی ہیں اور بہت سی ایسی ہیں جن کی از سرِ نو تشریح کی ضرورت ہے۔

دستاویز کی حساس نوعیت

ترک حکومت کا دعویٰ ہے کہ بہت سی ایسی احادیث ہیں جن کے بارے میں خیال کیا جا رہا ہے کہ وہ پیغمبرِ اسلام سے منسوب کر دی گئی ہیں اور بہت سی ایسی احادیث ہیں جن کی از سرِ نو تشریح کی ضرورت ہے۔بعض مبصرین کا کہنا ہے کہ اسلام کے عقائد کی از سر نو تشریح کی جا رہی ہے تاکہ مذہب کی تجدید کی جا سکے۔احادیث پر از سرِ نو نظر ڈالنے کی ضرورت کی حمایت کرنے والوں کا کہنا ہے کہ اسلام میں دلیل اور منطق جو چودہ سو سال پہلے اس کی بنیاد میں شامل تھی اسی روح کو تلاش کیا جا رہا ہے۔ کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ یہ ترکی میں مذہب میں اصلاحات کا آغاز ہے۔

ترکی کے حکام اس دستاویز کی حساس نوعیت اور اس سے روایتی مسلمانوں میں پیدا ہونے والے ممکنہ تنازعہ کی وجہ سے اس بارے میں پوری رازداری سے کام لے رہے تھے۔ لیکن انہوں نے بی بی سی سے اس کے متعلق بات کی اور اس کے مقاصد بیان کیے۔

انقرہ یونیورسٹی کے مذہب کے شعبے میں احادیث کا باریکی سے جائزہ لیا گیا ہے۔ اس منصوبے کے مشیر فیلکس کورنر کا کہنا تھا کہ بہت سی ایسی احادیث بھی ہیں جن کے بارے میں یہ دکھایا جا سکتا ہے کہ وہ پیغمبر کی وفات کے سینکڑوں سال بعد وجود میں آئیں۔

انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے آپ چند حدیثوں کی مدد سے خواتین کے ختنے کو جائز قرار دے سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا ’گو آپ کو ایسے پیغامات بھی ملیں گے کہ پیغمبر اسلام نے ایسا کرنے کا حکم دیا تھا جب کہ تاریخی طور پر یہ بھی ثابت کیا جا سکتا ہے کہ کس طرح جب دوسری تہذیبوں اور ثقافتوں کا اثر اسلام پر پڑنے لگا تو یہ رسم مسلمانوں میں رائج ہوگئی‘۔

اصلاحات کے حامیوں کا استدلال ہے کہ اسلامی اقدار کو مختلف ادوار میں دیگر ثقافتوں نے(جن میں سے اکثر قدامت پسند تھیں) بتدریج اپنے سماجی مفادات اور مقاصد کے لیے استعمال کیا۔احادیث کا نئے سرے سے جائزہ لینے والوں کا کہنا ہے کہ مختلف نسلوں نے اپنے سیاسی مقاصد کے لیے احادیث میں تبدیلیاں کیں اور انہیں پیغمبر اسلام سے منسوب کر دیا۔

بعض احادیث کے بارے میں اکثر مسلمانوں کا خیال ہے کہ انہیں سیاسی مقاصد کے لیے استعمال کیا گیا

ترکی کا ارادہ ہے کہ صدیوں کی ان ثقافتی تحریفوں سے جان چھڑائی جائے اور اسلام کی اصل اساس کی طرف لوٹا جا سکے۔

احادیث پر پھر سے نظر ڈالنے کے نظریے کے حامیوں کا کہنا ہے کہ پیغمبر اسلام کے بعض ایسے ارشادات بھی ہیں جن کو درست تسلیم کیا گیا تھا لیکن خِود ان میں بھی کچھ ترامیم کی گئی ہیں اور ان کی نئی تشریح ہوئی ہے۔

پروفیسر محمد گورمیز ترکی کے محکمۂ مذہبی امور کے ایک سینئر اہلکارہیں اور احادیث کے عالم بھی ہیں۔ انہوں نےاس بارے میں بہت واضح مثال پیش کی۔

انہوں نے کہا ایسے احکامات موجود ہیں کہ شوہر کے بغیر عورت کے تین دن سے زیادہ طویل سفر پر روانہ ہونے پراسلام میں ممانعت ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ پابندی کسی طور پر بھی مذہب یا اسلام کی طرف سے عائد نہیں کی گئی تھی بلکہ اس کی سیدھی سی یہ وجہ تھی کہ پیغمبر اسلام کے دور میں خواتین کا سفر پر اکیلے جانا کسی طرح بھی محفوظ نہیں تھا۔ لیکن ’وقت کے ساتھ ساتھ بعض لوگوں نے اس عارضی اور وقتی پابندی کو مذہب کا حصہ بنا لیا‘۔

ترکی میں حال ہی میں یونیورسٹیوں میں خواتین کے حجاب نہ پہن کر جانے کی پابندی ختم کی گئی ہے تاکہ وہ خواتین جو حجاب پہننا چاہتی ہیں، حقِ تعلیم سے محروم نہ رہیں

انہوں نے کہا کہ اصلاحِ حدیث منصوبے کا مقصد یہ باور کرانا ہے کہ چودہ سو سال پرانی احادیث کا از سر نو جائزہ لینا درست ہے اور ایسا جامع تحقیق اور مطالعے کی بنیاد پر کیا جا رہا ہے۔

پروفیسر گورمیز نے کہا کہ پیغمبر نے ایک خطبے میں فرمایا کہ انہیں اس دن کا شدت سے انتظار ہے جب خواتین تنہا لمبے سفر پر جا سکیں گی۔انہوں نے کہا کہ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ پیغمبرِ اسلام کا مقصد کیا تھا۔

انہوں نے کہا اس طرح کی پابندی ابھی تک کتابوں میں موجود ہے اور یہ عورتوں کے آزادانہ سفر پر قدغن لگاتی ہے۔

ترکی نے اصلاحات کے پروگرام کے تحت ساڑھے چار سو خواتین کو مذہب کی تعلیم دے کر انہیں واعظ بنایا ہے۔ ان خواتین کو ترکی کے وسیع دیہی علاقوں میں عورتوں کو مذہب کی روح سے روشناس کرانے کا کام سونپا گیا ہے۔

ایک واعظ خاتون نے وسطی ترکی میں خواتین کے ایک اجتماع میں عورتوں کو قرآن میں دیئے گئے برابری، انصاف اور انسانی حقوق کے اصولوں سے آگاہ کیا اور جن کی توثیق پیغمبرِ اسلام کی احادیث سے بھی ہوتی ہے۔


February 21, 2008

Broken Pots

No Massiah for Broken Pots


April 06, 2007

فرینک مشی


December 2022

Mo Tu We Th Fr Sa Su
Nov |  Today  |
         1 2 3 4
5 6 7 8 9 10 11
12 13 14 15 16 17 18
19 20 21 22 23 24 25
26 27 28 29 30 31   

Search this blog

Galleries

Most recent comments

  • thanks foir these information i like ur blog by Sonia on this entry
  • Thank you very much for the inforamtion … Much appreciated! by M Akram Khan on this entry
  • Dear Kamran, you got a point. However, as much as I would like to match His "behisab" blessings with… by on this entry
  • I like this moon sighting type of thing but as far as your Excel planner and prayer track record typ… by Kamran on this entry
  • Thank you. by on this entry
RSS2.0 Atom
Not signed in
Sign in

Powered by BlogBuilder
© MMXXII